پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو تیزی کا رجحان رہا

کراچی (آن لائن)حکومت کی جانب سے کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ اور تجارتی خسارہ کو درآمدات پر پابندی کے ذریعے کنٹرول کئے جانے،عالمی معاشی سست رویکے باعث رواں ہفتے مانیٹری پالیسی میں شرح سود برقرار رکھے جانے کی توقعات،چین کی جانب سے سرمایہ کاری میں اضافے اور سیاسی تناؤ میں کمی آنے کے امکانات پر پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو تیزی کا رجحان رہا،کے ایس ای100انڈیکس 42700پوائنٹس سے بڑھ کر42900پوائنٹس پر بند ہوا جبکہ مارکیٹ کے سرمائے میں 13ارب روپے سے زائدکا اضافہ بھی ریکارڈ کیا گیا۔کاروباری تیزی سے50.59فیصد حصص کی قیمتیں بھی بڑھ گئیں۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو کاروبار کا آغاز مثبت اور اور ٹریڈنگ کے دوران انڈیکس 43ہزار پوائنٹس کی نفسیاتی حد عبور کر گیاتاہم آئی ایم ایف کی جانب سے 80ارب روپے کا نیا ٹیکس لگانے کیلئے دباؤ کے نتیجے میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے یا پھر منی بجٹ کے خدشات پر فروخت کے دباؤ کی وجہ سے مارکیٹ43ہزار پوائنٹس کی نفسیاتی حد سے گر گئی۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو کے ایس ای100انڈیکس میں 167.44پوائنٹس کا اضافہ ریکارڈکیا گیا جس سے انڈیکس 42761.19پوائنٹس سے بڑھ کر42928.63پوائنٹس ہو گیااسی طرح 64.90پوائنٹس کے اضافے سے کے ایس ای30انڈیکس 15727.42پوائنٹس سے بڑھ کر15792.32پوائنٹس پر بند ہوا جبکہ کے ایس ای آل شیئرز انڈیکس 28927.19پوائنٹس سے بڑھ کر28982.94پوائنٹس پر جا پہنچا۔کاروباری تیزی کی وجہ سے مارکیٹ کے سرمائے میں 13ارب14کروڑ70لاکھ40ہزار606روپے کا اضافہ ریکارڈکیا گیا جس کے نتیجے میں سرمائے کا مجموعی حجم 68کھرب23ارب9کروڑ50لاکھ36ہزار989روپے سے بڑھ کر68کھرب36ارب24کروڑ20لاکھ77ہزار595روپے ہو گیا۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو 9ارب روپے مالیت کے19کروڑ59لاکھ73ہزار حصص کے سودے ہوئے جبکہ پیر کو4ارب روپے مالیت کے 13کروڑ 29لاکھ42ہزار حصص کے سودے ہوئے تھے۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں منگل کو مجموعی طور پر338کمپنیوں کا کاروبار ہوا جس میں سے171کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ،138میں کمی اور29کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں استحکام رہا۔کاروبار کے لحاظ سے ورلڈ کال ٹیلی کام 1کروڑ85لاکھ 85ہزار،ٹی پی ایل پراپرٹیز 1کروڑ85لاکھ،حیسکول پیٹرول 1کروڑ53لاکھ،پاک الیکٹرون 1کروڑ53لاکھ اور یونٹی فوڈز لمیٹڈ 1کروڑ40لاکھ حصص کے سودوں سے سرفہرست رہے۔قیمتوں میں اتار چڑھاؤ کے اعتبار سے اللہ وسایا ٹیکسٹائل کے بھاؤمیں 181.38روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا جس سے اسکے حصص کی قیمت 2599.88روپے ہو گئی اسی طرح60.60روپے کے اضافے سے محمود ٹیکسٹائل کے حصص کی قیمت 868.60روپے پر جا پہنچی جبکہ سیفائر فائبر کے حصص کی قیمت میں 89.99روپے کی کمی واقع ہوئی جس سے اسکے حصص کی قیمت 1140.01روپے ہو گئی اسی طرح12.99روپے کی کمی سے تھل انڈسٹریز کارپوریشنکے حصص کی قیمت 260.01روپے پر آ گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں